Tasawwuf Advertisement 2024

قومی خبریں

خواتین

اگر بچے خدمت نہیں کرتے تووالدین کو جائداد واپس لینے کا حق ۔مدراس ہائی کورٹ

عدالت نے کہا کہ 'پراپرٹی کی وصیت کرتے وقت محبت اور پیار کا معاملہ ہوتا ہے لیکن اگر کوئی مذکورہ ایکٹ کی خلاف ورزی کرتا ہے تو اسے تبدیل کیا جاسکتا ہے۔

مدراس : اگر بچے اپنے والدین کی صحیح خدمت نہیں کرتے تو ان کے نام کی گئی جائیداد بھی واپس لی جا سکتی ہے۔ یہ فیصلہ مدراس ہائی کورٹ نے دیا ہے۔ بنچ نے کہا کہ اگر والدین محسوس کرتے ہیں کہ انہیں محبت اور احترام کے بغیر رکھا جا رہا ہے تو وہ یکطرفہ طور پر بچوں کے نام کی گئی جائیداد کی وصیت کو منسوخ کر سکتے ہیں۔ جسٹس ایس ایم سبرامنیم نے ماں کے حق میں فیصلہ سناتے ہوئے کہا، ‘صرف اس بات کو دہرانے کے لیے کہ جائیداد کی وصیت بچوں کے فائدے کے لیے محبت کی وجہ سے کی گئی تھی لیکن ایساشہریت قانون اور ان کی دیکھ بھال اور بہبود کی خلاف ورزی کرتے ہوئے کیا گیا۔لہٰذا پیرنٹس ایکٹ کے مطابق رہنا پڑے گا۔
مدراس ہائی کورٹ نے سب رجسٹرار کے فیصلے کو درست قرار دیتے ہوئے کہا کہ ‘پراپرٹی کی وصیت کرتے وقت محبت اور پیار کا معاملہ ہوتا ہے لیکن اگر کوئی مذکورہ ایکٹ کی خلاف ورزی کرتا ہے تو اسے تبدیل کیا جاسکتا ہے۔ سب رجسٹرار کے حکم میں کوئی خامی نہیں ہے۔ تمل ناڈو کے تروپپور کی رہنے والی شکیرا بیگم نے اپنی جائیداد اپنے بیٹے محمد دیان کے نام منتقل کی تھی۔ والدہ نے سب رجسٹرار سے رابطہ کیا اور کہا کہ اس نے جائیداد اپنے بیٹے کے نام اس شرط پر دی تھی کہ وہ اس کی اچھی طرح دیکھ بھال کرے گا۔ اب اسے اپنے وعدے پر قائم رہنا ہے، جو وہ نہیں کر رہا ہے۔
اس پر احتجاج کرتے ہوئے بیٹے کی جانب سے کہا گیا کہ 20 اکتوبر سنہ 2020 کو جو وصیت کی گئی تھی اس میں اس بات کا ذکر نہیں تھا کہ اس کے بدلے میں اسے ماں کا خیال رکھنا ہے۔ بنچ نے کہا، ‘قواعد کی تمام دفعات کا مقصد بزرگ شہریوں کے حقوق کا تحفظ کرنا ہے۔ ان کے ساتھ انسانی سلوک کیا جائے۔ جب انسانی سلوک ان سے بے نیاز ہو اور ان کی عزت و آبرو کا تحفظ نہ کیا جا رہا ہو تو پھر ان دفعات پر عمل درآمد کرنا پڑتا ہے۔

No Comments:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *