قومی خبریں

خواتین

بچوں کےزعفرانی لباس پر اعتراض اسکول انتظامیہ کے لئے مہنگا پڑا

مدر ٹریسا ہائی اسکول کے نمائندے اور پرنسپل کے خلاف مقدمہ درج

حیدرآباد: منچیریال ضلع پولیس نے یہاں سے تقریباً 250 کلومیٹر دور کنی پلی گاؤں میں ‘ہنومان دیکشا لباس’ پہن کر ادارے میں آنے والے کچھ طلبہ پر مبینہ طور پر اعتراض کرنے کے الزام میں ایک اسکول کے نمائندے اور پرنسپل کے خلاف مقدمہ درج کیا ہے۔ڈانڈے پلی پولیس کے مطابق، طلباء کے والدین کی شکایت کی بنیاد پر، دفعہ 153 (اے) (مذہب یا نسل کی بنیاد پر مختلف گروہوں کے درمیان دشمنی کو فروغ دینا) اور 295 (اے) (مذہبی جذبات کی توہین) کے تحت منگل کو اسکول کے اہلکاروں کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا تھا ۔بلیسڈ مدر ٹریسا ہائی اسکول کی انتظامیہ نے بدھ کومیڈیا کو بتایا کہ دو دن قبل پرنسپل نے طلباء سے کہا کہ وہ اپنے والدین کو لے کر آئیں جب یہ دیکھاکہ وہ یونیفارم کی بجائے زعفرانی لباس پہنے ہوئے ہیں۔ اسکول کے نمائندے کی طرف سے دی گئی ویڈیو فوٹیج کے مطابق بعد میں، لوگوں کے ایک گروپ نے اسکول انتظامیہ سے معافی مانگنے کا مطالبہ کیا اور کچھ مشتعل مظاہرین نے مبینہ طور پر منگل کو اسکول کی کھڑکیوں کوتوڑ ڈالا۔

No Comments:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *