Tasawwuf Advertisement 2024

قومی خبریں

خواتین

فرضی انکاؤنٹر:ریٹائرڈ ڈی آئی جی کو 7 سال قید، ڈی ایس پی کو عمر قید کی سزا

فرضی انکاؤنٹر:ریٹائرڈ ڈی آئی جی کو 7 سال قید، ڈی ایس پی کو عمر قید کی سزا

اندروششٹھ
نئی دہلی، 07 جون: سی بی آئی کیسز کے موہالی کے اسپیشل جج دلباغ سنگھ نے اس وقت کے ڈی ایس پی، سٹی ترن تارن (ڈی آئی جی کی حیثیت سے ریٹائرڈ) کو اغوا کی دفعہ 364 کے تحت سات سال قید اور پچاس ہزار روپے جرمانے اور اس وقت کے ایس ایچ او/ایس ایچ او، تھانہ سٹی ترن کو سزا سنائی۔ ترن (ریٹائرڈ بطور ڈی ایس پی) کو گلشن کمار کے قتل کے مقدمے میں قتل، اغوا اور شواہد کو تباہ کرنے کی دفعہ 302، 364، 201 اور 21 کے تحت عمر قید اور 3 لاکھ 25 ہزار روپے جرمانے کی سزا سنائی گئی ہے۔
گلشن کو پنجاب پولیس نے 22 جون 1993 کو ان کے گھر سے اغوا کیا اور بعد ازاں 22 جولائی 1993 کو فرضی انکاؤنٹر میں قتل کر دیا۔15-11-1995 کو پرمجیت کور کی درخواست پر سپریم کورٹ نے سی بی آئی کو پنجاب پولیس کی جانب سے بڑی تعداد میں نامعلوم لاشوں کو آخری رسومات سے متعلق معاملے کی تحقیقات کا حکم دیا تھا۔
تفتیش کے دوران چمن لال نے بتایا کہ اس کے بیٹے گلشن کمار کو 22 جون 1993 کو اس وقت کے ڈی ایس پی سٹی ترن تارن دلباغ سنگھ کی قیادت میں پولیس ٹیم نے ان کے گھر سے اغوا کیا اور بعد میں 22 جولائی 1993 کو فرضی انکاؤنٹر میں قتل کردیا۔
پولیس نے 22 جولائی 1993 کو گھر والوں کو بتائے بغیر اس کے بیٹے کی لاش کو ترن تارن کے شمشان گھاٹ میں آخری رسومات ادا کردی۔ اس کے مطابق، سی بی آئی نے 28 فروری 1997 کو دلباغ سنگھ، اس وقت کے ڈی ایس پی سٹی ترن تارن، امرتسر اور 4 دیگر کے خلاف مقدمہ درج کیا تھا۔تحقیقات مکمل ہونے کے بعد اس وقت کے ڈی ایس پی دلباغ سنگھ، اس وقت کے ایس ایچ او/انسپکٹر گربچن سنگھ، اس وقت کے اے ایس آئی ارجن سنگھ (سماعت کے دوران انتقال کر گئے)، اس وقت کے اے ایس آئی دیویندر سنگھ (سماعت کے دوران انتقال کر گئے) اور اس وقت کے سب انسپکٹر شامل تھے۔ بلبیر سنگھ (سماعت کے دوران انتقال کر گئے) کے خلاف چارج شیٹ درج کی گئی۔عدالت کے سامنے پیش کیے گئے شواہد سے پتہ چلتا ہے کہ ملزم پولیس افسران نے قتل کو انکاؤنٹر کے طور پر دیکھا۔ گواہی اور دستاویزات مجرم پولیس افسران کی طرف سے بنائی گئی کہانیوں کو جھوٹا ثابت کرتے ہیں۔
عدالت میں سماعت کے دوران عینی شاہدین اور ٹھوس شواہد سے ثابت ہوا کہ ملزمان دلباغ سنگھ اور گربچن سنگھ سمیت دیگر نے گلشن کمار کو ان کے گھر سے اغوا کیا، غیر قانونی حراست میں رکھا اور بعد میں قتل کر دیا۔

No Comments:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *