Tasawwuf Advertisement 2024

قومی خبریں

خواتین

مایا وتی اب سوچ سمجھ کر مسلمانو ں کو ٹکٹ دیں گی

بی ایس پی سپریمو نے دلتوں کا شکریہ ادا کیا اور اقلیتوں کے تئیں ناراضگی کا اظہار کیا

لکھنؤ: بہوجن سماج پارٹی (بی ایس پی) کی صدر مایاوتی نے لوک سبھا انتخابات میں اپنی پارٹی کی ناقص کارکردگی کا جائزہ لینے کا ارادہ ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ مختلف انتخابات میں مناسب نمائندگی دینے کے باوجود مسلم کمیونٹی بی ایس پی کو ٹھیک سے نہیں سمجھ پا رہی ہے، اس لیے پارٹی مستقبل میں ایسا نہیں کر سکیں گے، بہت سوچ سمجھ کر ہی آنے والے انتخابات میں مسلمانوں کو موقع دیا جائے گا۔مایاوتی کی پارٹی منگل کو اعلان کردہ لوک سبھا انتخابات کے نتائج میں اپنا کھاتہ نہیں کھول سکی۔ اس سے پہلے 2014 کے لوک سبھا انتخابات میں بھی اسے ایک بھی سیٹ نہیں ملی تھی۔مایاوتی نے بدھ کو ایک تفصیلی بیان جاری کرتے ہوئے انتخابی نتائج پر ردعمل ظاہر کیا۔ انہوں نے کہا کہ ان کی پارٹی انتخابی نتائج کا ہر سطح پر مکمل تجزیہ کرے گی اور پارٹی اور اس کی مہم کے مفاد میں جو بھی ٹھوس اقدامات ضروری ہوں گے وہ اٹھائے گی۔انہوں نے پارٹی کی حمایت کرنے پر دلت برادری بالخصوص جاٹو برادری سے اظہار تشکر کیا لیکن مسلم برادری کے تئیں اپنی ناراضگی کا اظہار بھی کیا۔مایاوتی نے کہا، ’’بہوجن سماج پارٹی کا خاص حصہ، مسلم کمیونٹی، جس نے پچھلے کئی انتخابات اور اس بار لوک سبھا انتخابات میں مناسب نمائندگی دینے کے باوجود، بی ایس پی کو ٹھیک سے نہیں سمجھا، اس لیے اب ایسے میں۔ ان کو سوچنا چاہیے کہ پارٹی خود الیکشن میں موقع دے گی تاکہ آئندہ اس بار پارٹی کو نقصان نہ پہنچے۔
قابل ذکر ہے کہ اس سال لوک سبھا انتخابات میں بی ایس پی نے زیادہ سے زیادہ 35 مسلم امیدواروں کو ٹکٹ دیا تھا۔ منگل کو اعلان کردہ لوک سبھا انتخابات کے نتائج میں، سماج وادی پارٹی (ایس پی) نے اتر پردیش میں سب سے زیادہ 37 سیٹوں پر کامیابی حاصل کی ہے۔ اس کی اتحادی پارٹنر کانگریس کو بھی چھ سیٹیں ملی ہیں۔ مسلم کمیونٹی کو روایتی طور پر ایس پی کا ووٹر سمجھا جاتا ہے اور مانا جاتا ہے کہ اس بار بھی ایس پی اور کانگریس کو مسلم کمیونٹی کے زیادہ ووٹ ملے ہیں۔مایاوتی نے کہا، ’’لوک سبھا انتخابات کا جو بھی نتیجہ نکلے، وہ عوام کے سامنے ہے اور اب انہیں ملک کی جمہوریت، آئین اور قومی مفاد وغیرہ کے بارے میں سوچنا ہے اور فیصلہ کرنا ہے کہ کیا اس انتخاب کے نتائج کو درست قرار دینا چاہیے۔ مستقبل میں ان کی زندگیوں پر کیا اثرات مرتب ہوں گے اور ان کا مستقبل کتنا پرامن، خوشحال اور محفوظ ہو گا؟مایاوتی نے چلچلاتی گرمی میں ہونے والے لوک سبھا انتخابات پر بھی اپنا اعتراض ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ ان کی پارٹی شروع سے ہی الیکشن کمیشن سے مطالبہ کرتی رہی ہے کہ انتخابات کو طول نہ دیا جائے اور عام لوگوں کے ساتھ ساتھ لاکھوں سرکاری ملازمین بھی۔ الیکشن ڈیوٹی پر تعینات ملازمین کے مفادات کو مدنظر رکھتے ہوئے زیادہ سے زیادہ تین یا چار مرحلوں میں انتخابات کرائے جائیں۔

No Comments:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *