Tasawwuf Advertisement 2024

قومی خبریں

خواتین

جیلوں میں خاتون قیدیوں کے حاملہ ہونے پر کولکتہ ہائی کورٹ کا اظہار حیرت

نیائے مترکے ذریعے داخل عرضی کے مطابق اب تک کم از کم 196 بچوں کی پیدائش

کولکاتہ:مغربی بنگال میں خاتون قیدیوں کے حاملہ ہونے کا حیرت انگیز معاملہ سامنے آیا ہے۔ اس تعلق سے کلکتہ ہائی کورٹ نے جمعرات کو ایک مفاد عامہ عرضی پر سماعت کی اور اسے ایک سنگین معاملہ بتایا۔ کلکتہ ہائی کورٹ کے سامنے پیش اس عرضی میں بتایا گیا ہے کہ جیلوں میں اپنی سزا کاٹنے کے دوران خاتون قیدی حاملہ ہو رہی ہیں۔اس درخواست پر سماعت ہائی کورٹ کے چیف جسٹس ٹی ایس شیوگنامن اور جسٹس سپرتم بھٹاچاریہ کی بنچ نے کی۔ عرضی میں عدالت سے گزارش کی گئی ہے کہ اصلاح گھروں کے مرد ملازمین کو ایسے حصوں میں کام کرنے پر روک لگائی جائے جہاں خاتون قیدیوں کو رکھا جاتا ہے۔
یہ عرضی ایک ’نیائے متر‘ کے ذریعہ داخل کی گئی ہے جس میں بتایا گیا ہے کہ جیلوں میں اب تک کم از کم 196 بچوں کی پیدائش ہوئی ہے۔ یہ معاملہ جیل کے اندر بند خواتین کی سیکورٹی سے جڑا ہوا ہے۔ اس لیے عرضی گزار نے عدالت سے مطالبہ کیا ہے کہ اصلاح گھروں کے مرد ملازمین کو ان حصوں میں داخل ہونے سے پوری طرح روکا جائے جہاں خاتون قیدیوں کو رکھا جاتا ہے۔اس پورے معاملے پر چیف جسٹس شیوگنامن نے حیرانی ظاہر کی اور ایک حکم پاس کرتے ہوئے کہا کہ ہماری جانکاری میں لایا گیا یہ معاملہ انتہائی سنگین ہے۔ ہم ان سبھی معاملوں کو مجرمانہ امور کی سماعت کرنے والی بنچ کو منتقل کرنا مناسب سمجھتے ہیں۔

No Comments:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *