Tasawwuf Advertisement 2024

قومی خبریں

خواتین

تقریر کے دوران سوامی پرساد پرنوجوان نے پھینکا جوتا

سوامی پرساد موریہ جمعہ کو فتح آباد علاقے میں پہنچے تھے۔ جیسے ہی اکھل بھارت ہندو مہاسبھا کے کارکنوں کو ان کی آمد کی خبر ملی، وہ متحد ہو گئے۔ سوامی پرساد موریہ کے قافلے کو فتح آباد چوراہے پر روک دیا گیا۔ اس دوران سوامی پرساد موریہ گو بیک کے نعرے بلند ہونے لگے۔
پولیس نے کسی طرح ہندو مہاسبھا کے کارکنوں کو روکنے کی کوشش کی، لیکن غصہ پر قابو نہیں پایا جا سکا۔ اس دوران سوامی پرساد موریہ کے قافلے کو کالا جھنڈا دکھایا گیا اور ان کی گاڑی پر سیاہی پھینکی گئی۔
فتح آباد میں ہوتم سنگھ نشاد کی حمایت میں ووٹ مانگنے کے لیے سابق وزیر سوامی پرساد موریہ جیسے ہی مائیک پر آئے۔ ہندو مہاسبھا کے ایک عہدیدار بھدوریا نے جوتا پھینک کر مارا جو مائیک پر جا لگا۔ پولیس والوں نے گاؤں والوں کے ساتھ مل کر اسے پکڑ لیا۔
جب پولیس حالات پر قابو پانے کے لیے آگے آئی تو مہاسبھا کے کارکنوں کے ساتھ گرما گرم بحث شروع ہوگئی۔ اس دوران سنجے جاٹ، منیش پنڈت، سوربھ شرما، انکت چوہان، بابو بھائی، منیش کمار، فتح آباد اسمبلی کے اسپیکر مہندر مہنت، رادھیشیام داس مہاراج، شانتی بھائی، وریندر سنگھ سمیت اکھل بھارت ہندو مہاسبھا کے درجنوں کارکنان موجود تھے۔

No Comments:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *